Taif Mei Karbala Ke Safinay ki Roshni || طائف میں کربلا کے سفینے کی روشنی

0
243
Taif Mei Karbala Ke Safinay ki Roshni
طائف میں کربلا کے سفینے کی روشنی

طائف میں کربلا کے سفینے کی روشنی
ملتی ہے اِس جہاں کو مدینے کی روشنی

کھاتے تھے زخم سب کی ہدایت کے واسطے
پھیلا رہے تھے آپ ؐ قرینے کی روشنی

اے موجبِ اوارض و سما اب کیجیئے عطا
یا صاحبِ لولاک مدینے کی روشنی

شَق الصَدر سے ہو گئے حیران جبرائیل
پھیلی تھی کلُ جہان میں سینے کی روشنی

رمضان ہو کہ ما ہ ربیع الا ولی ہو بس
چاروں طرف ہے ان کے مہینے کی روشنی

اک صاحبِ کمال کا وہ حسن با کمال
مہکا رہا تھا اُن کے پسینے کی روشنی

یزداں بھی اُن پہ بھیجتا ہے رات دن درود
شمس و قمر سے بڑھ کے نگینے کی روشنی

جس وصلِ بے مثال میں طاری تھی بے خودی
بخشش میں تھی نماز خزینے کی روشنی

سرکار آپٖؐ کی ہی گدا ہوں کرم ہو بس
درکار ہے مجھے بھی خزینے کی روشنی

شاہیں نبی کے دم سے ہی مجھ کو ہو ئی عطا
مرتے ہوئے وجود میں جینے کی روشنی

نجمہ شاہین کھوسہ

Taif Mei Karbala Ke Safinay ki Roshni

Taif Mei Karbala ke Safinay Ki Roshni
Milti Hai Iss Jahaan Ko Madinay Ki Roshni

Khatay Thay Zakhm Sab ki Hidayat Ke Wastay
Phela Rahay Thay Aap (S.A.W) Qarenay ki Roshni

Ay Mojib e Arzo-o-Samaa ab Kijiye Attaa
Ya Sahib e Loo Laak Madinay Ki Roshni

Shaq alsadar se Ho Gaye Heraan Jibraeel
Pheli Thi Kul Jahaan Mei Senay Ki Roshni

Ramzan Ho k Mah-e-Rabiul Awali ho Bas
Charoon Taraf hai un ke Mahinay ki Roshni

Ek Sahib e Kamal ka Woh Husn Ba Kamal
Mehka Raha Tha Un ke Pasinay Ki Roshni

Yazdaan Bhi Un Pe Bhejta Hai Raad Din Drood
Shams-o-Qamar se Barh ke Naginay ki Roshni

Jis Wasl e Be Misaal Mie Taari Thi Be Khudi
Bakhshish Mei Thi Namaz Khazinay ki Roshni

Sarkar Aap (S.A.W) ki He Gadaa Hon Karam Ho Bas
Darkar Hai Mujhe Bhi Khazinay ki Roshni

Shaheen Nabi ke Dum Se He Mujh ko Hui Attaa
Marte Huway Wajood Mei Jenay ki Roshni

Najama Shaheen Khosa

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here