Na Kaheen Se Door Hain Manzalein || نہ کہیں سے دور ہیں منزلیں

0
613
Na Kaheen Se Door Hain Manzalein
نہ کہیں سے دُور ہیں مَنزلیں نہ کوئی قریب کی بات ہے

نہ کہیں سے دُور ہیں مَنزلیں نہ کوئی قریب کی بات ہے
جسے چاہیں اُس کو نواز دیں یہ درِحبیبﷺ کی بات ہے

جسے چاہا دَر پہ بُلالیا ، جسے چاہا اپنا بنا لیا
یہ بڑے کرم کے ہیں فیصلے ، یہ بڑے نصیب کی بات ہے

وہ خدا نہیں ، بخدا نہیں، مگر وہ خدا سے جُدا نہیں
وہ ہیں کیا مگر وہ کیا نہیں یہ محب حبیبﷺ کی بات ہے

وہ مَچل کے راہ میں رہ گئی ، یہ تڑپ کے دَ ر سے لپٹ گئی
وہ کِسی امیر کی آہ تھی، یہ کِسی غریب کی بات ہے

تُجھے اے منوّرِ بے نوا درِ شاہ سے چاہئیے اور کیا
جو نصیب ہو کبھی سامنا تو بڑے نصیب کی بات ہے.

منور بدایونی

Ay Saa! bSyedi se Ja Kehna Gham ke Mary Salam Kehte Hain

Na Kaheen Se Door Hain Manzelein Na Koi Qareeb Ki Baat Hai
Jise Chahein Uskw Nawaz Dein Dar-e-Habeeb ki Baat Hai

Jise Chaha Dar Pe Bula Liya, Jise Chaha Apna Bana Liya
Ye Barray Karam ke Hain Faislay, Ye Barray Naseeb ki Baat Hai

Woh Khuda Nahe, BaKhuda Nahe, Magar Woh Khuda Se Juda Nahe
Woh Hain Kiya Magar Woh Kiya Nahe Ye Mohib Habeeb Ki Baat Hai

Woh Machal ke Rah Mein Reh Gai, Ye Tarrap ke Dar se Lipat Gai
Woh kisi Ameer Ki Aah Thi, Ye Kisi Ghareeb ki Baat Hai

Tujhe Ay Munawwar Be Nawa Dar-e-Shah se Chahiye aur Kiya
Jo Naseeb Ho Kabhi Samna To Barray Naseeb ki Baat Hai

Munawar Badewani

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here