قربان میں اُنﷺ کی بخشِش کے مقصد بھی زباں پر آیا نہیں

0
191
Qurban-Main-Unki-Bakhshish-Ke
قربان میں اُنﷺ کی بخشِش کے مقصد بھی زباں پر آیا نہیں

قربان میں اُنﷺ کی بخشِش کے مقصد بھی زباں پر آیا نہیں
بِن مانگے دیا اور اتنا دیا، دامن میں ہمارے سمایا نہیں

آواز، کَرم دیتا ہی رہا، تھک ہار گئے لینے والے
منگتوں کی ہمیشہ لاج رکھی، محرُوم کوئی لوٹایا نہیں

رحمت کا بھرم بھی تُمﷺ سے ہے، شفقت کا بھرم بھی تُمﷺ سے ہے
ٹھکرائے ہوئے انساں کو بھی تُمﷺ نے تو کبھی ٹھکرایا نہیں

وہ رحمت کیسی رحمت ہے، مفہوم سمجھ لو رحمت کا
اُسکو بھی گلے سے لگایا ہے جسے اپنا کسی نے بنایا نہیں

ایمان مِلا اُنﷺ کے صدقے، قرآن مِلا اُنﷺ کے صدقے
رحمٰن ملا اُنﷺ کے صدقے وہ کیا ہے جو ہم نے پایا نہیں

خُورشیدِ قیامت کی تابش، مانا کہ قیامت ہی ہو گی
ہم اُنﷺ کے ہیں گھبرائیں کیوں، کیا ہم پہ نبیﷺ کا سایا نہیں

ہمدم ہیں وہی معذُوروں کے غمخوار ہیں سب مجبُوروں کے
سرکارﷺ مدینہ نے تنہا کس کس کا بوجھ اُٹھایا نہیں

وہ غارِ حِرا کی خِلوت ہو یا جلوتِ قُرب او ادنٰی
سرکارﷺ نے اپنی اُمّت کو رکھا ہے یاد، بھلایا نہیں

اُنﷺ کا تو شِعار کریمی ہے، مائل بہ کرم ہی رہتے ہیں
جب یاد کیا ہے صلے علٰی، وہﷺ آ ہی گئے، تڑپایا نہیں

اس مُحسنِ اعظمﷺ کے یُوں تو خالدؔ پہ ہزاروں اِحساں ہیں
قربان مگر اس اِحساں کے اِحساں بھی کیا تو، جتایا نہیں

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here