روزگار تلاش کرنے میں مدد دینے پر کمیشن لینا کیسا ہے؟

0
16
Fatwa-For-Paying-Commission-on-Finding-Job
روزگار تلاش کرنے میں مدد دینے پر کمیشن لینا کیسا ہے؟

اگر ایک شخص ایسی کمپنی چلاتا ہو جس میں بیروزگاروں‌کو روزگار دلوانے میں مدد کی جاتی ہے اور کسی کو نوکری دلواتے ہوئے یوں طے کیا جاتا ہے کہ جب نوکری مل جائے تو ایک سال تک اپنی تنخواہ کا ٪30 کمپنی کو دینا ہوگا۔ کیا اس طرح کمیشن طے کرنا اور لینا شرعاً جائز ہے؟ براہ کرم معتبر کتب فقہ کے حوالے سے فتویٰ کو مزین فرمایے گا۔ شکریہ۔

Fatwa-For-Paying-Commission-on-Finding-Job

جواب

کسی شخص سے کوئی چیز مقررہ کرائے پر لینا یا مقررہ اجرت پر کسی سے مزدوری کروانا اجارہ کہلاتا ہے۔ فقہائے کرام کے نزدیک جارہ سے مراد ہے

الْإِجَارَةُ عَقْدٌ عَلَى الْمَنَافِعِ بِعِوَضٍ.

عقدِ اجارہ ایک معاہدہ ہے جو کسی معاوضہ کے بدلے کسی منفعت پر کیا جائے۔

  1. مرغينانی، الهدايه، 3: 213، المکتبة الاسلامية

  2. ابنِ نجيم، البحرالائق، 7: 298، دارالمعرفة

  3. الشيخ نظام وجماعة من علماء الهند، الفتاوی الهنديه، 4: 409، دارالفکر

اور امام جرجانی کے نزدیک اجارہ کا مطلب ہے:

الاجارة: عبارة عن العقد علیٰ المنافع بعوض هو مال، و تمليک المنافع بعوض اجارة و بغير عوض اعارة.

اجارہ اس معاہدے سے عبارت ہے کہ جو کسی معاوضہ کے بدلے منفعت پر کیا جائے، یہ معاوضہ (عام طور پر) مال ہوتا ہے اور جب معاوضہ کے بدلے منفعت کا مالک ہو تو اجارہ (ہوتا ہے) اور بغیر معاوضہ کے ہو تو عاریت ہے۔

جرجانی، التعريفات، 1: 23، دارالکتاب العربی، بيروت

یعنی اجارہ سے مراد ایسا معاہدہ ہے جو مقررہ مال کے بدلے اپنی خدمات پیش کرنے پر عمل میں آتا ہے۔ مزدوری، ٹھیکہ، کرایہ اور ملازمت وغیرہ سب ہی اجارہ کی مختلف اقسام ہیں۔ آجر یا مستاجر اس شخص یا ادارے کو کہتے ہیں جو کسی سے اجرت پر کام لے رہا ہو اور اجیر وہ شخص ہے جو اجرت کے بدلے اپنی خدمات پیش کرتا ہے۔

جو صورت آپ نے پیش کی ہے یہ بھی اجارہ ہی کی ایک شکل ہے جس میں معاوضہ یا اجرت کے بدلے اپنی خدمات اور معاونت پیش کرتے ہیں۔ اس لیے معاونت کے بدلے آپ کے لیے کمیشن لینا جائز ہے۔ لیکن ملازمت دلوانے کے لیے کسی کی حق تلفی کرنا جائز نہیں، اس لیے میرٹ کا خیال رکھا جانا چاہیے۔ اگر کمیشن لینے کی لالچ میں میرٹ کی خلاف ورزی کی گئی اور غیرشرعی و غیرقانونی ذرائع کی مدد لی گئی تو پھر کمیشن لینا بھی جائز نہیں ہوگا۔ میرٹ کے مطابق، شرعی و قانونی تقاضوں کو مدِنظر رکھتے ہوئے مدد کرنا اور اس کے بدلے کمیشن لینا جائز ہے۔

==================

فتوی نمبر : 3851

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here